Saturday, 1 October 2011

Remembering Naseem Begum

پاکستان کی فلمی گائیکی کا ایک بہت بڑا نام ۔۔۔نسیم بیگم ۔۔۔تھا جو ساٹھ کے عشرے کے پہلے نصف کی سب سے مقبول اور مصروف ترین گلوکارہ تھی اور جس کا سب سے بڑا کمال یہ تھا کہ وہ عروج اس نے۔۔۔ ملکہ ترنم نور جہاں۔۔۔ کی موجودگی میں حاصل کیا تھا جو اسی دور میں دم ٹھونک کر پس پردہ گلوکاری کے میدان میں آ گئی تھیں لیکن ۔۔۔نسیم بیگم ۔۔۔سے سخت مقابلہ کرنا پڑا تھا۔فن گائیکی پر مکمل عبور رکھنے والی ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔ نے کچھ کم نہیں ، صرف پانچ برسوں میں چار ایوارڈز حاصل کر کے اپنی عظمت کی دھاک بٹھا دی تھی اور آج بھی موسیقی کی متوالوں کے لئے ناقابل فراموش فنکارہ ہے۔ آج کی نشست میں چالیس سال قبل اچانک انتقال کر جانے والی اس مایہ ناز گلوکارہ کو اس کے یاد گاراور خاص خاص فن پاروں کے ساتھ یاد کرنے کی کوشش کی جار ہی ہے۔۔۔
نسیم بیگم ۔۔۔کی پہلی فلم تو ۔۔۔گڈی گڈا (1956ء)۔۔۔ بتائی جاتی ہے لیکن اس کی پہچان فلم ۔۔۔بے گناہ (1958ء) ۔۔۔کی یہ سپر ہٹ غزل بنی تھی جسے ۔۔۔سید عاشور کاظمی ۔۔۔ نے لکھا تھا:
*۔۔۔نینوں میں جل بھر آئے ، مورکھ من تڑپائے رے۔۔۔روٹھ گیا میرا پیار۔۔۔
اس دل کش غزل کی دھن موسیقار۔۔۔شہر یار ۔۔۔نے بنائی تھی جنہوں نے ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔کو ۔۔۔نور جہاں ثانی ۔۔۔کے طور پر پیش کیا تھا۔یہ وہ دور تھا جب۔۔۔ میڈم نور جہاں۔۔۔ صرف انہی فلموں کے لئے نغمہ سرائی کرتی تھی جن میں بطور ہیروئن نظر آتی تھی جبکہ پس پر دہ گلوکارہ کے طور پر ۔۔۔زبیدہ خانم۔۔۔کی اجارہ داری تھی۔ معاون گلوکاراؤں میں ۔۔۔کوثر پروین ۔۔۔ منور سلطانہ ۔۔۔اقبال بانو۔۔۔وغیرہ قابل ذکر تھیں ۔اسی دور میں ۔۔۔نذیر بیگم۔۔۔ناہید نیازی۔۔۔اور۔۔۔آئرن پروین ۔۔۔بھی نئی آوازیں تھیں۔اسی سال کی ایک اور فلم ۔۔۔ جان بہار۔۔۔میں۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔کا یہ کلاسیکل گیت بھی بڑا پسند کیا گیا تھا:
*۔۔۔ہم تو جی بھر کر خنجر چلائیں گے۔۔۔آج اپنے عشاق کو آزمائیں گے۔۔۔
اس گیت کے موسیقار ۔۔۔رشید عطرے ۔۔۔تھے۔یاد رہے کہ بہت سے گیت وقت کی گرد میں چھپ جاتے ہیں لیکن جب وہ سماعت سے ٹکراتے ہیں تو سا معین عش عش کر اٹھتے ہیں کہ ایسے گیت بھی ہماری فلموں میں گائے گئے ہیں۔لیکن ہر گیت کا ذکر طوالت اور وقت کی کمی کے باعث ممکن نہیں ہے۔یو ٹیوب پر ایسے بے شمار گیت اپ لوڈ ہو چکے ہیں جن میں کچھ گیتوں کی کولیکشن پیش کی جارہی ہے اور جب جب وقت ملا ان میں مزید اضافہ کیا جاتا رہے گا۔ایسے ہی بہت سے نایاب گیتوں کو سننے کے لئے ۔۔۔محترم محمد حنیف صاحب۔۔۔ کی ویب سائٹ۔۔۔پاکستان مووی ڈیٹا بیس۔۔۔ بھی وزٹ کریں۔
1959ء کا سال ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔کے لئے ۔۔۔کرتار سنگھ۔۔۔جیسی بھاری بھر کم فلم لے کر آیاتھا جس کا گیت:
*۔۔۔دیساں دا راجہ، میرے بابل دا پیارا۔۔۔ویر میرا گھوڑی چڑھیا۔۔۔
تو اس قدر مقبول ہوا کہ ایک لوک گیت کا درجہ اختیار کر گیا تھا اور شادی بیا ہ کی رسموں کے لازمی ہو گیا تھا۔ وارث لدھیانوی کے اس لازوال گیت کی دھن موسیقاروں کی جوڑی ۔۔۔سلیم اور اقبال ۔۔۔نے بنائی تھی۔
اسی فلم میں ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔نے ۔۔۔زبیدہ خانم۔۔۔کے ساتھ ایک مشہور دو گانا بھی گایا تھا:
*۔۔۔ماہی نے تینوں لے جانا ۔۔۔ لے جانا۔۔۔نی۔۔۔
اسی سال نغماتی فلم ۔۔۔نیند۔۔۔میں ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔نے ۔۔۔ملکہ ترنم نور جہاں۔۔۔ کے ساتھ دو دو گانے بھی گائے تھے جن میں سے پہلے گیت میں ۔۔۔زبیدہ خانم۔۔۔بھی ساتھ تھی:
*۔۔۔اکیلی مت جانا۔۔۔زمانہ نازک ہے۔۔۔
*۔۔۔جیا دھڑکے سکھی ری زور سے۔۔۔مل کے آئی بلم چت چور سے۔۔۔
ان گیتوں کے موسیقار۔۔۔رشید عطرے۔۔۔تھے جنہوں نے ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔سے بے شمار گیت گوائے تھے۔
1960ء کا سال۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔کے انتہائی عروج کا سال تھا جس میں اس نے ۔۔۔سہیلی۔۔۔سلمیٰ۔۔۔شام ڈھلے ۔۔۔ اور ۔۔۔خیبر میل۔۔۔جیسی فلموں میں بڑے بڑے سپر ہٹ گیت گائے تھے۔فلم ۔۔۔سہیلی۔۔۔میں اے حمید ۔۔۔کی موسیقی میں فیاض ہاشمی ۔۔۔کے لکھے ہوئے بیشتر گیت سپر ہٹ ہوئے تھے جن میں مندرجہ ذیل گیت قابل ذکر ہیں:
*۔۔۔ہم بھول گئے ہر بات مگر تیرا پیار نہیں بھولے۔۔۔
*۔۔۔ہم نے جو پھول چنے دل میں چبھے جاتے ہیں۔۔۔
*۔۔۔مکھڑے پہ سہرا ڈالے ۔۔۔آجا رے آنے والے۔۔۔
*۔۔۔کہیں دو دل جو مل جاتے ۔۔۔بگڑتا کیا زمانے کا۔۔۔
یہ آخری گیت ۔۔۔سلیم رضا۔۔۔کے ساتھ گائے ہوئے مقبول عام دو گانوں میں پہلا دو گانا تھا۔اس سا ل کی دوسری بڑی فلم۔۔۔سلمیٰ۔۔۔تھی جو ۔۔۔میڈم نور جہاں۔۔۔کی بطور گلوکارہ پہلی فلم بھی شمار کی جاتی ہے۔اس فلم کے موسیقار بھی ۔۔۔رشید عطرے ۔۔۔اور نغمہ نگار۔۔۔تنویر نقوی۔۔۔تھے۔اس فلم کا یہ کلاسیکل گیت بڑے کمال کا تھا:
*۔۔۔سانوریا ، من بھائیو۔۔۔ رے۔۔۔جبکہ اس فلم کے یہ گیت بھی بڑے پسند کئے گئے تھے:
*۔۔۔جب بدلی میں چندا چھپ جائے۔۔۔دل گبھرائے۔۔۔بھر بھر آئے۔۔۔
*۔۔۔اونچی نیچی راہوں میں پائل موری ٹھمکے۔۔۔
اسی سال فلم۔۔۔خیبر میل۔۔۔میں ۔۔۔بابا جی اے چشتی۔۔۔کی دھن پر ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔کی یہ سپر ہٹ غزل قوالی کے انداز میں تھی جو اکثر ٹی وی پر معروف گلوکارہ۔۔۔نیرہ نور۔۔۔کو گاتے ہوئے دیکھا گیا ہے:
*۔۔۔اے جذبہ دل گر میں چاہوں۔۔۔ہر چیز مقابل آ جائے۔۔۔
اسی سال کی فلم۔۔۔شام ڈھلے۔۔۔میں صوفی غلام مصطفی تبسم۔۔۔کی یہ با کمال غزل بھی ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔ہی کی آواز میں تھی جس کی دھن بھی رشید عطرے ۔۔۔نے ہی بنائی تھی:
*۔۔۔سو بار چمن مہکا۔۔۔سو بار بہار آئی۔۔۔دنیا کی وہی رونق۔۔۔دل کی وہی تنہائی۔۔۔
یاد رہے کہ اسی سال پچا س کے عشرے کی سب سے مقبول و مصروف گلوکار۔۔۔زبید ہ خانم۔۔۔نے فلم ۔۔۔دو استاد۔۔۔کی تکمیل کے دوران کیمرہ مین۔۔۔ریاض بخاری۔۔۔سے شادی کر کے فلمی دنیا کو خیر آباد کہہ دیا تھا جس نے ۔۔۔نسیم بیگم ۔۔۔کی مصروفیات میں اضافہ کر دیا تھا۔
1961ء میں۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔بڑی مصروف رہی لیکن سپر ہٹ گیتوں کا تناسب کم رہا۔فلم ۔۔۔گلفام۔۔۔کے یہ دو گیت بڑے پسند کئے گئے تھے:
*۔۔۔آنکھوں میں آنکھیں ڈال کے دیکھا نہ کیجئے۔۔۔
*۔۔۔ حضور دیکھئے۔۔۔ضرور دیکھئے۔۔۔شباب ہے نشے میں چور چور دیکھئے۔۔۔
ان کے علاوہ ایک کلاسیکل گیت۔۔۔جھن جھن پائل باجے۔۔۔خود ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔پر فلمایا گیا تھاجو اپنی نوعیت کا واحد موقع تھا۔اس فلم کے موسیقار بھی ۔۔۔رشید عطرے ۔۔۔ہی تھے۔جبکہ فلم۔۔۔جادو گر۔۔۔میں ۔۔۔سلیم اقبال ۔۔۔صاحبان کی دھن پر یہ غزل بھی بڑی پسند کی گئی تھی:
*۔۔۔رنگ محفل ہے اور نہ تنہائی۔۔۔زندگی کس طرف چلی آئی۔۔۔
اسی سال گلوکارہ۔۔۔مالا۔۔۔کو پنجابی فلم۔۔۔آبرو۔۔۔میں متعارف کروایا گیا تھا۔
1962ء میں ۔۔۔نسیم بیگم ۔۔۔شہرت و مقبولیت کی بلندیوں پر تھی۔اس سال اس کے اردو فلمی کیریر کی سب سے بڑی فلم۔۔۔شہید۔۔۔ریلیز ہوئی تھی جس کے بیشتر گیت امر گیتوں کا درجہ رکھتے ہیں۔ایکبار پھر موسیقار ۔۔۔ رشید عطرے ۔۔۔نے لازوال دھنیں بنائیں۔خاص طور پر ممتاز شاعر۔۔۔منیر نیازی۔۔۔کی یہ غزل تو اس فلم کی جان اور ۔۔۔نسیم بیگم ۔۔۔کے فلمی کیریر کا مان تھی:
*۔۔۔اس بے وفا کا شہر ہے اور ہم ہیں دوستو۔۔۔اشک رواں کی نہر ہے اور ہم ہیں دوستو۔۔۔
اس فلم کے دیگر گیتوں میں یہ بھی بڑے مقبول گیت تھے:
*۔۔۔میری نظریں ہیں تلوار۔۔۔کس کا دل ہے روکے وار۔۔۔توبہ توبہ استغفار۔۔۔
*۔۔۔نقاب جب اٹھایا ۔۔۔شباب رنگ لایا۔۔۔زمانہ ڈگمگایا۔۔۔حبیبی حیا حیا۔۔۔
نغمات کے لحاظ سے اس سال کی فلم۔۔۔اولاد۔۔۔بھی ۔۔۔نسیم بیگم ۔۔۔کے فلمی کیریر کی بڑی یاد گار فلم تھی۔اس فلم کے موسیقار۔۔۔اے حمید ۔۔۔تھے اور ۔۔۔فیاض ہاشمی ۔۔۔کے یہ گیت بڑے پسند کئے گئے تھے:
*۔۔۔نام لے لے کے تیرا ہم تو جئے جائیں گے۔۔۔
*۔۔۔تم ملے پیار ملا۔۔۔اب کوئی ارمان نہیں۔۔۔ (مع منیر حسین)
*۔۔۔تم قوم کی ماں ہو ۔۔۔سوچو ذرا۔۔۔عورت سے ہمیں یہ کہنا ہے۔۔۔
اسی سال کی فلم۔۔۔دروازہ۔۔۔میں ایکبار۔۔۔سلیم اقبال ۔۔۔کی جوڑی نے ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔سے یہ سپر ہٹ گیت گوایا تھا:
*۔۔۔چھپ گئے ستارے ۔۔۔ ندیا کنارے۔۔۔تم نہ ہی آئے پیا۔۔۔تم نہ ہی آئے۔۔۔
جبکہ اسی فلم میں ۔۔۔سلیم رضا۔۔۔کے ساتھ ۔۔۔نسیم بیگم ۔۔۔کا یہ گیت بھی بڑ ا مقبول ہوا تھا:
*۔۔۔صورت توری دیکھے بنا نہ ہی چین۔۔۔
نسیم بیگم ۔۔۔ایک مکمل آل راؤنڈگلوکارہ تھی اور ہر قسم کے گیت بڑی آسانی سے گا لیتی تھی۔فلم ۔۔۔عذرا۔۔۔میں اس نے ۔۔۔ احمد رشدی ۔۔۔کے ساتھ یہ مزاحیہ دو گانا بھی بڑی عمدگی سے گایا تھا:
*۔۔۔دل میں یوں یوں ہوتا ہے۔۔۔کیوں ہوتا ہے۔۔۔کیا ہوتا ہے۔۔۔
خواجہ خورشید انور ۔۔۔کی دھن پر فلم ۔۔۔گھونگھٹ۔۔۔کا یہ کلاسیکل گیت بھی بڑا مقبول ہوا تھا:
*۔۔۔چھن چھن چھن ۔۔۔میری پائل کی دھن۔۔۔گائے تیرا ہی ترانہ۔۔۔
1963ء کی سب سے بڑی نغماتی فلم۔۔۔اک تیرا سہارا ۔۔۔تھی جس میں نسیم بیگم۔۔۔نے پہلی بار ۔۔۔ماسٹر عنایت حسین ۔۔۔کی دھنوں پر یہ لازوال گیت گائے تھے جن میں میرا ذاتی طور پر سب سے پسندیدہ ترین گیت بھی تھا:
*۔۔۔گھنگور گھٹا لہرائی ہے۔۔۔پھر یاد کسی کی آئی ہے۔۔۔
میرا ساتھی میرے پاس نہیں۔۔۔میرے نیناں برسیں۔۔۔چھم چھم چھم۔۔۔
اس کے علاوہ یہ دونوں گیت بھی بڑے مقبول ہوئے تھے:
*۔۔۔اے دل کسی کی یا د میں ۔۔۔ہوتا ہے بے قرار کیوں۔۔۔
*۔۔۔بادلوں میں چھپ رہا ہے چاند کیوں۔۔۔ (مع سلیم رضا)
اسی سال ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔ نے ۔۔۔سلیم اقبال۔۔۔کی نغمہ بار فلم ۔۔۔ باجی ۔۔۔کا سب سے سپر ہٹ گیت:
*۔۔۔چندا توری چاندنی میں جیا جلا جائے رے۔۔۔
گانے کا اعزاز حاصل کیا تھا حالانکہ اس فلم میں ۔۔۔میڈم نور جہاں ۔۔۔اور۔۔۔فریدہ خانم۔۔۔جیسی لی جنڈز بھی تھیں۔اسی سال فلم۔۔۔کرتار سنگھ۔۔۔کے بعد ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔نے ایک بار پھر کسی پنجابی فلم کے لئے کوئی سپر ہٹ سولو گیت گایا تھا۔ موسیقار ۔۔۔منظور اشرف۔۔۔کی دھن پرفلم۔۔۔تیس مار خان۔۔۔کا یہ گیت گلی گلی گونجا تھا:
*۔۔۔میری جھانجھر چھن چھن چھنکے۔۔۔لشکارا جاوے گلی گلی۔۔۔
اسی سال کی فلم۔۔۔موج میلہ۔۔۔بھی ایک بہت بڑی فلم تھی جس کا سب سے ہٹ گیت:
*۔۔۔اچی ماڑی تے ددھ پئی رڑکاں۔۔۔مینوں سارے ٹبر دیاں جھڑکاں۔۔۔ہائے ۔۔۔
ان گیتوں میں سے ایک ہے جو پنجاب کے قابل فخر کلچر اور ماضی کی سنہری یادوں کو تازہ کرتا ہے۔
1964ء میں بھی ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔خاصی مصروف رہی ۔اس سال کا سب سے سپر ہٹ گیت فلم۔۔۔حویلی۔۔۔سے تھا جس کے دھن ۔۔۔خواجہ خورشید انور ۔۔۔نے بنائی تھی:
*۔۔۔میر ابچھڑا بلم گھر آگیا۔۔۔میری پائل باجے چھنن چھنن چھنن۔۔۔
اسی فلم میں ۔۔۔نسیم بیگم ۔۔۔نے ۔۔۔میڈم نور جہاں۔۔۔اور۔۔۔مالا۔۔۔کے ساتھ شادی بیاہ کا یہ سپر ہٹ گیت بھی گایا تھا:
*۔۔۔جا کے سسرال گوری ۔۔۔میکے کی لاج رکھنا۔۔۔
اسی سال کی فلم ۔۔۔لٹیرا۔۔۔میں موسیقار۔۔۔سیف چغتائی۔۔۔کا سب سے سپر ہٹ گیت بھی ۔۔۔نسیم بیگم ۔۔۔ہی نے گایا تھا:
*۔۔۔نگاہیں ہو گئیں پر نم۔۔۔ذرا آواز تو دینا۔۔۔دکھوں میں گر گئے ہیں ہم۔۔۔
ان کے علاوہ اس سال مندرجہ ذیل گیت بڑے مقبول ہوئے تھے:
*۔۔۔آبھی جا دلدارا۔۔۔بچھڑا ہے تو مجھ سے۔۔۔ (موسیقی رشید عطرے۔۔۔ فلم فرنگی)
*۔۔۔اک میرا چاند ۔۔۔ایک میرا تارا۔۔۔ (موسیقی منظور اشرف ۔۔۔فلم شکریہ)
*۔۔۔میرے دل کا بنگلہ خالی ہے۔۔۔ (مع احمد رشدی ۔۔۔موسیقی منظور اشرف ۔۔۔فلم شکریہ)
*۔۔۔آج میرے منڈیر کاگا بولے۔۔۔ (موسیقی رشید عطرے ۔۔۔فلم شباب)
*۔۔۔میں سو جاؤں یا مصطفی ﷺ کہتے کہتے۔۔۔ (موسیقی رشید عطرے ۔۔۔فلم شباب)
*۔۔۔چھنا چھن بچھوا بولے۔۔۔ کنگنا بولے۔۔۔ (مع مسعود رانا۔۔۔ موسیقی دیبو ۔۔۔فلم بیٹی)
*۔۔۔وفاؤں کی ہم کو سزا تو نہ دو گے۔۔۔ (مع مالا۔۔۔موسیقی اے حمید۔۔۔ فلم پیغام)
*۔۔۔ہیں پیار کی لمبی راہیں ، دشوار کبھی۔۔۔ (مع احمد رشدی ۔۔۔موسیقی مصلح الدین ۔۔۔فلم دیوانہ)
1965ء کا سب سے یادگار اور سدا بہار گیت تو ایک جنگی ترانہ ہے جسے اگلے سال کی فلم ۔۔۔مادر وطن ۔۔۔میں شامل کیا گیا تھا۔نسیم بیگم نے اس گیت کو بڑے رچاؤ اور قومی جذبے کے ساتھ گایا تھا :
*۔۔۔اے راہ حق کے شہیدو۔۔۔وفا کی تصویرو۔۔۔تمہیں وطن کی ہوائیں سلام کہتی ہیں۔۔۔
لیکن یہ سال فلمی گیتوں کے لحاظ سے ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔کے زوال کا سال ثابت ہوا تھا۔۔۔اردو فلموں میں کوئی گیت قابل ذکر کامیابی سے محروم رہا تھا اور صرف پاکستان کی پہلی پلاٹینم جوبلی پنجابی فلم۔۔۔جی دار۔۔۔کا یہ گیت (موسیقار ایکبار پھر رشید عطرے ہی تھے) سپر ہٹ ہوا تھا:
*۔۔۔چھلا میرا کنے گھڑیا۔۔۔ایس چھلے دیاں دھماں پیا ں کابل تے کشمیر ۔۔۔ہو
نسیم بیگم۔۔۔کے اردو فلموں میں زوال کی وجہ گلوکارہ۔۔۔مالا۔۔۔کی بے مثال مقبولیت تھی جسے اس سال کی نغماتی فلم ۔۔۔ نائلہ ۔۔۔کی وجہ سے ساٹھ کے عشرہ کے دوسرے نصف میں اردو فلموں پر مکمل اجارہ داری حاصل ہو گئی تھی البتہ پنجابی فلموں میں ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔بے حد مصروف رہی۔اس سال کے دیگر مقبول گیت کچھ اس طرح سے تھے:
*۔۔۔اپنے وعدوں کو بھلا دو کہیں ایسا تو نہیں ۔۔۔(مع احمد رشدی ۔۔۔موسیقی بخشی وزیر ۔۔۔فلم فیشن)
*۔۔۔بول نے تیرے انمول۔۔۔ (مع منیر حسین ۔۔۔موسیقی منظور اشرف ۔۔۔فلم ڈولی)
*۔۔۔ویر سوہنیا وے۔۔۔ حالی ڈولی ٹور نہ۔۔۔ (موسیقی اختر حسین۔۔۔ فلم ہڈ حرام)
*۔۔۔آسمانی تارے نیں ۔۔۔(مع مالا ، منیر حسین ، روشن ۔۔۔فلم من موجی ۔۔۔موسیقی طفیل فاروقی)
*۔۔۔تیری ونجلی واج مینوں ماری۔۔۔ (موسیقی بخشی وزیر ۔۔۔فلم ہیر سیال)
*۔۔۔آکے دے جا وکھایاں نی۔۔۔ (مع مہدی حسن۔۔۔ فلم ہیر سیال۔۔۔ موسیقی بخشی وزیر)
یاد رہے کہ فلم۔۔۔ہیر سیال۔۔۔شہنشا ہ غزل مہدی حسن۔۔۔کی پہلی پنجابی فلم تھی اور ان کا پہلا دوگانا۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔ہی کے ساتھ تھا۔اسی سال جنگ ستمبر کی وجہ سے پاکستان میں بھارتی فلموں کی نمائش پر پابندی لگ گئی تھی جس سے پاکستان کی اردو فلموں کو خاصا نقصان پہنچا تھا اور پنجابی فلموں کی پروڈکشن میں خاصا اضافہ ہو گیا تھا۔نسیم بیگم ۔۔۔بھی اب زیادہ تر پنجابی فلموں کے لئے مختص ہو گئی تھی جبکہ اردو فلموں میں ۔۔۔مالا۔۔۔کے گیتوں کو زیادہ پسند کیا جاتا تھا ۔میڈم نور جہاں۔۔۔مخصوص اردو فلموں کے لئے ہوتی تھیں جن کی تعداد زیادہ نہیں ہوتی تھی۔
1966ء میں نغمات کے لحاظ سے ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔کی سب سے بڑی فلم۔۔۔پائل کی جھنکار۔۔۔تھی جو ۔۔۔آنجہانی سلیم رضا۔۔۔کی بھی آخری بڑی نغماتی فلم تھی۔اس فلم کی موسیقی بھی ۔۔۔رشید عطرے۔۔۔نے مرتب کی تھی اور مندرجہ ذیل گیت سپر ہٹ ہوئے تھے:
*۔۔۔ہم نے تو تمہیں دل دے ہی دیا۔۔۔ (مع سلیم رضا)
*۔۔۔میرے دل کے تار بجیں بار بار۔۔۔ (مع مہدی حسن)
اسی سال کی فلم۔۔۔کون کسی کا۔۔۔میں ۔۔۔منظور اشرف۔۔۔کی دھن پر ۔۔۔نسیم بیگم نے۔۔۔حبیب جالب ۔۔۔ کا یہ گیت اکیلے بھی گایا تھا لیکن اس سدا بہار گیت کو زیادہ شہرت ۔۔۔مسعودرانا۔۔۔کے ساتھ دو گانے کی صورت میں ملی تھی جو میں اپنے انتہائی بچپن میں لوری کے انداز میں اپنی والدہ سے بھی سنا کرتا تھا:
*۔۔۔دے گا نہ کوئی سہارا ۔۔۔ان بے درد فضاؤں میں۔۔۔سو جا غم کی چھاؤں میں۔۔۔
اس سال کی پنجابی فلم۔۔۔بھر یا میلہ۔۔۔میں بھی۔۔۔ نسیم بیگم۔۔۔ کے بڑے شاندار گیت تھے لیکن وہ سب ۔۔۔ مسعودرانا ۔۔۔کے گائے ہوئے امر گیت ۔۔۔سجناں نے بوہے اگے چک تن لئی۔۔۔کے سائے میں گم ہو گئے تھے۔بابا چشتی۔۔۔ کی دھنوں پر ۔۔۔حزیں قادری ۔۔۔کے یہ گیت بڑے سریلے تھے:
*۔۔۔راہ میرا روکنا ایں۔۔۔نت مینوں ٹوکنا ایں۔۔۔تیرا کی جانا اے بیگانے پت دا۔۔۔
*۔۔۔دلا ڈول گئی آں میں۔۔۔او گل کھول گئی اوں میں۔۔۔
*۔۔۔اج توں میں تیرے کولوں گھنڈ کڈ لینا اے۔۔۔
اس سال کے دیگر گیتوں میں مندرجہ ذیل گیت مقبول ہوئے تھے:
*۔۔۔ٹانگہ آگیا کچہریوں خالی تے۔۔۔ (فلم ماجھے دی جٹی ۔۔۔موسیقی طفیل فاروقی)
*۔۔۔ایک سنہرے گاؤں میں۔۔۔پیار کی ٹھنڈی ۔۔۔ (فلم مجبور۔۔۔ موسیقی تصدق حسین)
1967ء میں بھی۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔کی مصروفیت زیادہ تر پنجابی فلموں تک ہی رہیں جبکہ اردو فلموں میں صرف فلم ۔۔۔رشتہ ہے پیار کا۔۔۔کا یہ گیت سپر ہٹ ہوا تھا:
*۔۔۔زخم دل چھپا کے روئیں گے ۔۔۔تجھ کو آزما کے روئیں گے۔۔۔
ناشاد کی دھن پر یہ گیت ۔۔۔زیبا ۔۔۔پر فلمایا گیا تھا۔۔۔یہ فلم ۔۔۔زیبا اور وحید مراد۔۔۔کی جوڑی کی پہلی رنگین فلم تھی اور پہلی ہی فلم تھی جس کی شوٹنگ یورپ میں کی گئی تھی۔
پنجابی فلموں میں فلم۔۔۔میرا ویر۔۔۔کا موسیقار جوڑی ۔۔۔سلیم اقبال۔۔۔کا یہ گیت۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔کے گائے ہوئے پنجابی گیتوں میں میرا پسندیدہ ترین گیت رہا ہے جسے میں اکثر بے اختیار گنگناتا رہتا ہوں۔ اس کا ایک ایک بول موتیوں کی طرح ہے جو ۔۔۔مسلم اویسی۔۔۔نامی گمنام نغمہ نگار کی کاوش ہے:
*۔۔۔جدا دل ٹٹ جائے۔۔۔جدی گل مک جائے۔۔۔جنوں چوٹ لگے۔۔۔او جانے۔۔۔
اس سال کی فلم۔۔۔یار مار۔۔۔میں ۔۔۔بابا چشتی۔۔۔نے۔۔۔نسیم بیگم اور آئرن پروین۔۔۔سے ایک بڑا منفرد اور دلچسپ گیت گوایا تھا جس میں ایک عورت دوسری سے اپنا ادھار واپس لینے آتی ہے اور مقروض عورت اسے یہ کہہ کر ٹال دیتی ہے کہ بے صبری کیوں ہوتی جا رہی ہو، میں مکر تو نہیں گئی بس جب کبھی ماں باپ شادی کریں گے، بچے ہوں گے ، انہیں بیاہوں گی اورڈولی پر پیسے واروں گی تو تیرا قرض بھی واپس کر دوں گی۔شادی بیا ہ کے موقع پر لڑکیوں میں مختلف طرح کے کھیل تماشے اور مقابلے ہوتے تھے ، یہ خوبصورت گیت ایسے ہی موقع کے لئے تھا:
*۔۔۔جا بھیڑی بے وسائی۔۔۔نی پیسہ منگن آئی۔۔۔نی تینوں شرم نہ آئی۔۔۔
اس سال کے دیگر مقبول گیت کچھ اس طرح سے تھے:
*۔۔۔میرا دل سڑہدا۔۔۔ (مع شوکت علی۔۔۔ فلم میر ا ویر۔۔۔ موسیقار سلیم اقبال)
*۔۔۔کلا بندہ ہووے پاویں کلا رکھ وے۔۔۔ (فلم چاچا جی۔۔۔ موسیقار بابا چشتی)
*۔۔۔مانے یا نہ مانے غفوراً غفورا۔۔۔(مع احمد رشدی ۔۔۔فلم لاکھوں میں ایک ۔۔۔موسیقار نثار بزمی)
*۔۔۔میں حسین ہوں اکیلی ہزاروں میں۔۔۔ (فلم حاتم طائی ۔۔۔موسیقار نثار بزمی)
*۔۔۔عاشقاں دی ریت ایخو۔۔۔ (مع مسعود رانا، شوکت علی ۔۔۔فلم لٹ دا مال ۔۔۔موسیقارسلیم اقبال)
*۔۔۔جل تو جلا ل تو۔۔۔ایس بلا نوں ٹال تو۔۔۔ (مع مسعودرانا۔۔۔فلم مقابلہ۔۔۔ موسیقارطفیل فاروقی)
1968ء میں ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔کا سب سے سپر ہٹ گیت فلم۔۔۔پرستان۔۔۔میں تھا۔موسیقار ایک بار پھر ۔۔۔رشید عطرے ۔۔۔تھے اور گیت۔۔۔تنویر نقوی ۔۔۔کالکھا ہوا تھا:
*۔۔۔محبت کے دم سے یہ دنیا حسین ہے۔۔۔محبت نہیں تو کچھ بھی نہیں ہے۔۔۔
اسی سال کی اردو فلم۔۔۔عصمت۔۔۔کا یہ گیت بھی بڑا مقبول ہوا تھا:
*۔۔۔اب تیری مرضی تو آئے نہ آئے ۔۔۔میں نے تو تیرا انتظار کیا۔۔۔
موسیقار ۔۔۔سلیم اقبال۔۔۔ نے ہمیشہ ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔کے لئے گیت کمپوز کئے تھے۔اس سا ل کی فلم ۔۔۔پاکیزہ۔۔۔میں یہ دھن ،شاعری اور گائیکی بھی بڑے کمال کی تھی:
*۔۔۔ایک دل تھا ۔۔۔ہزاروں غم پائے۔۔۔سوچتے ہیں ، جہاں میں کیوں آئے۔۔۔
اس سال کی ایک پنجابی فلم۔۔۔جگ بیتی۔۔۔میں ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔نے ایکبار پھر شادی بیاہ کاایک بڑا ہی خوبصورت گیت۔۔۔بابا چشتی ۔۔۔کی دھن میں گایا تھا:
*۔۔۔نی ویر میرا ووہٹی لیایا۔۔۔نی اساں انوں پلنگ بٹھایا۔۔۔
اس سال کے دیگر یادگار گیت کچھ اس طرح سے تھے:
*۔۔۔چوڑا میری بانہہ دا چھنکدا اے چھن چھن (مع آئرن پروین ۔۔۔فلم میدان۔۔۔موسیقی عبداللہ)
*۔۔۔کسے دا منڈا ۔۔۔کسے دی دھی۔۔۔واہ نی محبتے۔۔۔(فلم بابل دا ویڑا۔۔۔ موسیقی بابا چشتی)
*۔۔۔ساڈے دل تے پے گیا ڈاکہ۔۔۔ (مع مسعودرانا ۔۔۔فلم میلہ دو دن دا ۔۔۔موسیقی بابا چشتی)
1969ء میں ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔کی اردو فلموں میں صرف فلم ۔۔۔زرقا۔۔۔ہی قابل ذکر تھی جس میں۔۔۔رشید عطرے۔۔۔ہی کی موسیقی میں یہ گیت بڑے پسند کئے گئے تھے:
*۔۔۔میں پھول بیچنے آئی۔۔۔توڑ کے دل بلبل کا ، خوشبو باغوں میں لائی۔۔۔
*۔۔۔میرا دل تھا بے قرار۔۔۔ تھا تمہارا نتظار۔۔۔ (مع منیر حسین )
پنجابی فلموں میں نسیم بیگم بڑی مصروف رہی۔سب سے اہم فلم ۔۔۔چن ویر۔۔۔تھی جس میں ۔۔۔بابا چشتی ۔۔۔کی دھنوں پر یہ گیت بڑے مقبول ہوئے تھے:
*۔۔۔تیرے گل کینٹھا، میرے گل گانی۔۔۔دے جا چھلا نشانی ، تیری مہربانی۔۔۔
*۔۔۔پیار والے جتھے رہندے ۔۔۔اسیں اوتھے رواں گے۔۔۔
*۔۔۔او سجناں۔۔۔ا ے دو دن موج بہاراں دے۔۔۔ (مع منیرحسین)
فلم۔۔۔لنگوٹیا۔۔۔میں ایک بار پھر ۔۔۔بابا چشتی۔۔۔نے نسیم بیگم کے لئے یہ لاجواب دھن تیارکر کے میلہ ہی لوٹ لیا تھا:
*۔۔۔چھپ جاؤتاریوپا دیو اندھیر وے۔۔۔اساں اس رات دی نئیں ویکھنی سویر وے۔۔۔
ایک اور سپر ہٹ فلم۔۔۔مکھڑا چن ورگا۔۔۔میں بابا چشتی نے ۔۔۔نسیم بیگم اور مسعودرانا۔۔۔ کی آوازوں میں یہ سپر ہٹ دو گانا بھی تخلیق کیا تھا:
*۔۔۔تیری اکھ دا نئیں جواب۔۔۔بھلیاں کھڑیا سرخ گلاب۔۔۔
ٹور جیویں وگدا پیا چناب۔۔۔تے مکھڑا چن ورگا۔۔۔
فلم۔۔۔جنٹر مین۔۔۔میں ۔۔۔نذیر علی۔۔۔کی شوخ دھن پر ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔کا یہ گیت بھی مقبول ہوا تھا جسے سنجیدہ دھن میں ۔۔۔مسعودرانا۔۔۔نے گایا تھا:
*۔۔۔اپنا بنا کے ۔۔۔دل لا کے ۔۔۔چھڈ جاویں نہ۔۔۔میرے ہانیا۔۔۔
فلم ۔۔۔کوچوان۔۔۔میں ۔۔۔ایم اشرف۔۔۔کی دھن پر۔۔۔عنائت حسین بھٹی ۔۔۔کے علاوہ یہ گیت ۔۔۔ نسیم بیگم ۔۔۔کی آواز میں بھی پسند کیا گیا تھا:
*۔۔۔تک دلبریاں دلبر دیاں۔۔۔اج ہاسے مونہوں بول پئے۔۔۔
فلم۔۔۔جگو۔۔۔میں ۔۔۔طفیل فاروقی ۔۔۔کی دھن پر ۔۔۔نسیم بیگم اورمنیر حسین۔۔۔کے الگ الگ گا ئے ہوئے گیت بھی بڑے مقبول ہوئے تھے:
*۔۔۔سوہنیا نیناں والیا۔۔۔نین ملاندا جا۔۔۔اک الہڑ مٹیار نوں مست بنادا جا۔۔۔
جبکہ ان دونوں کا یہ ماہیا بھی بڑا پسند کیا گیا تھا:
*۔۔۔صدقے صدقے اج ساڈا جی کردا۔۔۔سانوں مل وے ہانیا۔۔۔
فلم۔۔۔یملا جٹ۔۔۔میں ۔۔۔ایم اشرف ۔۔۔ہی نے ۔۔۔نسیم بیگم اور مسعودرانا۔۔۔سے یہ سریلا رومانٹک گیت بھی گوایا تھا:
*۔۔۔لنگی بن کے پشوری،پا کے کڑتا لاہوری۔۔۔ویکھو منڈا میرے ہان دا مجاجاں کردا۔۔۔
1970ء میں۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔کا سب سے سپر ہٹ اردو گیت ایک سپر فلاپ فلم۔۔۔کوثر۔۔۔میں موسیقار ۔۔۔ عنایت حضروی ۔۔۔کی دھن میں تھا:
*۔۔۔اب کہاں ان کی وفا۔۔۔یاد وفا باقی ہے۔۔۔ساز تو ٹوٹ گیا۔۔۔اسکی صدا باقی ہے۔۔۔
فلم۔۔۔یہ راستے ہیں پیار کے۔۔۔میں بھی۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔کا یہ گیت تھا لیکن اس گیت کو ۔۔۔مسعود رانا۔۔۔ کی آواز میں بے مثل مقبولیت ملی تھی۔ موسیقار ۔۔۔اعظم بیگ۔۔۔تھے:
*۔۔۔زمانے میں رہ کے رہے ہم اکیلے۔۔۔ہمیں راس آئے نہ دنیا کے میلے۔۔۔
اس سال کے دیگر مقبول گیت کچھ اس طرح سے تھے:
*۔۔۔سانوں وی لے چل نال وے باؤ سوہنی گڈی والیا۔۔۔ (فلم چن پتر ۔۔۔موسیقی بابا چشتی)
*۔۔۔سجن سوہنا نہ ملے نہ سہی۔۔۔ (فلم چڑہدا سورج ۔۔۔موسیقی وجاہت عطرے)
*۔۔۔میں چھم چھم نچاں۔۔۔ (مع میڈم نور جہاں۔۔۔ فلم ہیر رانجھا۔۔۔موسیقی خورشید انور)
*۔۔۔کچی کچی نیندرے جگا لیا ای مینوں وے۔۔۔ (فلم ماں پتر ۔۔۔موسیقی بابا چشتی)
1971ء ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔کی زندگی کا آخری سال ثابت ہوا تھا۔اب تک کی معلومات کے مطابق 1976ء تک نسیم بیگم کے نغمات فلموں میں سنائی دیئے۔ ظاہر ہے کہ وہ سبھی گیت زیادہ سے زیادہ اسی سال تک گائے گئے ہونگے۔ ان میں سے مقبول ترین گیتوں کی فہرست کچھ اس طرح سے ہے:
*۔۔۔مل گئی آسمان سے زمین۔۔۔ (مع مہد ی حسن۔۔۔ فلم پرائی آگ1971ء۔۔۔موسیقی خورشید انور)
*۔۔۔مجھ سے تجھ کو پیار ہے کتنا۔۔۔ (مع رجب علی ۔۔۔فلم پرائی آگ1971ء ۔۔۔موسیقی خورشید انور)
*۔۔۔دن چڑھیا اتوار دا سوہنا۔۔۔اج سرکاری چھٹی اے (فلم بابا دینا 1971ء۔۔۔ موسیقی بابا چشتی)
*۔۔۔چناں وے اساں بنھے گھنگرو (مع ساجدہ روحی۔۔۔ فلم گھنگرو1971ء ۔۔۔موسیقی بخشی وزیر)
*۔۔۔ہتھ جوڑا پکھیاں دا۔۔۔ (مع منیر حسین ۔۔۔فلم چانن اکھیاں دا 1971ء۔۔۔ موسیقی بابا چشتی)
*۔۔۔نہ اب وہ سماں ہے ۔۔۔نہ ہیں وہ فضائیں۔۔۔ (فلم پردیس 1972ء۔۔۔ موسیقی نذیر علی)
*۔۔۔میری جھانجھر دیوے دہائی ، ماہی وے میرا غصے۔۔۔ (فلم ہیر ا موتی 1972ء۔۔۔موسیقی طافو)
*۔۔۔میرا پیار بھرا سنسار لٹا۔۔۔ (مع رنگیلا ۔۔۔فلم میری محبت تیرے حوالے1972ء ۔۔۔موسیقی کمال احمد)
*۔۔۔ٹوٹ گیا ہے دل۔۔۔ (مع مہدی حسن ۔۔۔فلم میں اکیلا 1972ء ۔۔۔موسیقی بخشی وزیر)
*۔۔۔ناز کر ناز کر حسن پر ناز کر (مع منیر حسین ۔۔۔فلم میری زندگی ہے نغمہ1972ء۔۔۔ موسیقی نثار بزمی)
*۔۔۔سنو بہارو،آج پیا سے ہو گی ملاقات (مع مالا ۔۔۔فلم زندگی ایک سفر ہے 1972ء ۔۔۔موسیقی ناشاد)
*۔۔۔نقاب تو اٹھائیے۔۔۔ (مع احمد رشدی ۔۔۔فلم بہشت 1974ء ۔۔۔موسیقی اے حمید )
*۔۔۔تیرے ورگا سوہنا گھبرو۔۔۔ (مع مسعودرانا۔۔۔فلم پلیکھا 1975ء۔۔۔موسیقی بابا چشتی)
*۔۔۔تک چن دیاں چمکاں۔۔۔ (مع مسعودرانا۔۔۔فلم پیار کدے نئیں مردا1976ء۔۔۔موسیقی سلیم اقبال)
نسیم بیگم۔۔۔کی ایک غیر ریلیز شدہ فلم۔۔۔وصیت۔۔۔میں۔۔۔مجیب عالم۔۔۔کے ساتھ یہ انتہائی سریلا گیت بھی تھا:
*۔۔۔قدموں نے رک کے۔۔۔نگاہوں نے جھک کے۔۔۔کہو کیا کہا ہے۔۔۔
ان فلمی گیتوں کے علاوہ ۔۔۔نسیم بیگم ۔۔۔نے ریڈیو پاکستان پر ایک شاہکار غزل گائی تھی جسے پاکستان کے قومی ترانے کے خالق۔۔۔ابو الاثر حفیظ جالندھری۔۔۔نے لکھا تھا اور جسے بعد میں بہت سے گلوکاروں نے بھی گایا تھا:
*۔۔۔محبت کرنے والے کم نہ ہوں گے۔۔۔تیری محفل میں لیکن ہم نہ ہوں گے۔۔۔!
نسیم بیگم ۔۔۔1936ء میں امرتسر میں ۔۔۔بدھاں بائی۔۔۔نامی مغنیہ کے گھر پیدا ہوئی تھی۔اس کی ابتدائی تعلیم و تربیت ۔۔۔استاد عاشق علی خان ۔۔۔نے کی تھی اور فلمی گائیکی کے رموز و اسرارسکھانے والی تھیں۔۔۔ ملکہ غزل فریدہ خانم۔۔۔ کی بڑی بہن اور ۔۔۔ملکہ ترنم نور جہاں۔۔۔ کی آئیڈئل تیس کے عشرہ کی ممتاز گلوکارہ ۔۔۔مختار بیگم۔۔۔جو ممتاز ڈرامہ نگار ۔۔۔آغا حشر کاشمیری ۔۔۔ کی شریک حیات بھی تھیں۔یہی وجہ تھی کہ ۔۔۔نسیم بیگم۔۔۔ نہ صرف کلاسیکل موسیقی پر عبور رکھتی تھی بلکہ فلمی گائیکی کے تمام تقاضوں پر بھی پورا اترتی تھی۔نسیم بیگم ۔۔۔کا انتقال صرف 35سال کی عمر میں ۔۔۔ 29ستمبر1971ء ۔۔۔ کو ہو گیا تھا جب اس کے چھٹے بچے کے پیدائش کے بعد اس کے دماغ کی شریان پھٹ گئی تھی۔لاہور کے ایک معروف بک پبلشر ۔۔۔دین محمد۔۔۔کی بیوی تھی اور لاہور ہی کے میانی صاحب قبرستان میں سپرد خاک ہوئی تھی۔







1 comment:

Absar Ahmed said...

Naseem Begum ka Aik Khubsurat Qaumi Naghma"Aye Madar-e-Watan Ooncha ho Tera Naam" bhi hai jo 1965 mai Releas hua