Sunday, 2 October 2011

Qateel Shafai

Qateel Shafai
قتیل شفائی
ادبی حلقوں میں عام طور پر فلمی شاعروں کودرخور اعتنا نہیں سمجھا جاتا تھا کیونکہ فلمی شاعری کو ۔۔۔تک بندی۔۔۔کہہ کر اس کا مذاق اڑایا جاتا تھا اور اس حقیقت کا ادراک نہیں کیا جاتا تھاکہ فلمی شاعری کسی مخصوص کہانی اورصورتحال کے مطابق ہوتی تھی جو بظاہر ادبی شاعری سے کہیں زیادہ مشکل کام تھا۔یہ بھی ایک اٹل حقیقت ہے کہ فلمی شاعری ہی زبان زد عام ہوتی تھی اور ادبی شاعری عام طور پر اخبار رسالوں اورردی کی کتابوں میں ہی بکتی تھی ۔ ہماری آج کی شخصیت پاکستانی فلم انڈسٹری کے عظیم شاعر۔۔۔قتیل شفائی ۔۔۔ ایک ایسے فلمی شاعرتھے کہ جنہوں نے نہ صرف فلمی شاعری کی توقیر میں اضافہ کیا تھا بلکہ ادبی حلقوں کو بھی داد دینے پر مجبور کر دیا تھا ۔کسی فلمی شاعر پر تفصیل سے لکھنا آسان کام نہیں ہے کیونکہ میری معلومات فلم بینی اوربے شمار مواد کے مطالعہ تک محدود ہوتی ہیں جبکہ فلموں کے ٹائٹلز پر اکثر اوقات ایک سے زائد شاعرو ں کے نام لکھے جاتے تھے اس لئے یہ جاننا مشکل ہوتا تھا کہ کون سا گیت کس شاعر کا ہے۔عین ممکن ہے کہ مندرجہ ذیل مضمون میں کوئی گیت کسی اور شاعر کا ہواور اسے۔۔۔قتیل شفائی صاحب ۔۔۔سے منسوب کر دیا گیا ہو۔۔۔ایسے مقبول عام گیت بھی بہت سے ہوں گے جو ۔۔۔قتیل شفائی صاحب۔۔۔نے لکھے ہوں گے لیکن ان کا تذکرہ یہاں نہیں ہو سکا۔۔۔اس کے لئے پیشگی معذرت خواہ ہوں لیکن میں نے پوری کوشش کی ہے کہ جن گیتوں کا مجھے یقین ہے ، صرف انہی کا ذکر کروں۔۔۔
قتیل شفائی ۔۔۔کوپاکستان کی پہلی فلم۔۔۔تیری یاد (1948ء)۔۔۔کا نغمہ نگار ہونے کا اعزاز حاصل ہے۔(یاد رہے کہ ۔۔۔تنویر نقوی۔۔۔ اور۔۔۔ سیف الدین سیف ۔۔۔نے بھی فلم ۔۔۔تیری یا د۔۔۔ کے گیت لکھے تھے)۔نصف صدی کے فلمی کیرئر میں انہوں نے بے شمار فلموں کے گیت تخلیق کئے تھے جن میں سے بیشتر سپر ہٹ ہوئے تھے۔ان کے تمام گیتوں کا شمار تو ممکن نہیں ہے لیکن ان کی دسویں برسی پر ان کے مقبول عام فلمی گیتوں کو یاد کر کے انہیں خراج تحسین پیش کیا جا رہا ہے۔
قتیل شفائی۔۔۔کو اصل کامیابی فلم۔۔۔گلنار (1953ء)۔۔۔سے ملی تھی جو اتفاق سے عظیم موسیقار۔۔۔ماسٹر غلام حیدر۔۔۔کی پاکستان میں واحد کامیاب فلم تھی۔اس فلم میں ۔۔۔ملکہ ترنم نور جہاں۔۔۔ کا گا یاہوااور ۔۔۔قتیل شفائی ۔۔۔کا لکھا ہوا یہ گیت سپرہٹ ہوا تھا:
*۔۔۔لو چل دیئے وہ ہم کو تسلی دیئے بغیر۔۔۔اک چاند چھپ گیا ہے اجالا کئے بغیر۔۔۔
1955ء میں۔۔۔ قتیل شفائی ۔۔۔کو فلم ۔۔۔قاتل۔۔۔اور۔۔۔نوکر۔۔۔کے گیتوں نے لازوال شہرت دی تھی۔فلم ۔۔۔قاتل ۔۔۔میں ۔۔۔ماسٹر عنایت حسین۔۔۔ کی دھن پر ان کا یہ گیت ممتاز غزل گائیکہ ۔۔۔اقبال بانو۔۔۔نے گایا تھا جو بے حد مقبول ہوا تھا:
*۔۔۔الفت کی نئی منزل کو چلا۔۔۔یوں ڈال کے بانہیں بانہوں میں۔۔۔
دل توڑنے والے دیکھ کے چل۔۔۔ہم بھی پڑے ہیں راہوں میں۔۔۔
یا ر لوگوں نے اس شہر ہ آفاق غزل کوبنیا د بنا کران دونوں کے تعلقات میں دال میں کوئی کالا نکالنے کی کوشش بھی کی تھی۔
فلم۔۔۔نوکر۔۔۔میں ۔۔۔بابا جی اے چشتی ۔۔۔کی دھن میں گائی ہوئی ۔۔۔منور سلطانہ ۔۔۔اور۔۔۔کوثر پروین۔۔۔کی آوازوں میں یہ لوری پاکستانی فلمی تاریخ کی سب سے مقبول ترین لوری رہی ہے جو ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔ نے لکھی تھی:
*۔۔۔راج دلارے۔۔۔میری اکھیوں کے تارے ۔۔۔تیرے واری واری جاؤں۔۔۔
دلچسپ بات یہ ہے کہ یہ فلم اوراس کی یہ لوری ایک بھارتی فلم ۔۔۔جیون جیوتی (1953ء)۔۔۔کا چربہ تھاجسے ۔۔۔ساحر لدھیانوی ۔۔۔نے لکھا تھا اور جسے بھارت کی تین بڑی گلوکاراؤں۔۔۔لتا منگیشکر، آشا بھونسلے اور گیتا دت۔۔۔نے گایا تھا لیکن پاکستانی نقل اصل سے کہیں بہتر تھی۔
1956ء میں ریلیز ہونے والی ہدایتکار ۔۔۔مسعود پرویز۔۔۔کی شاہکار میوزیکل فلم ۔۔۔انتظار۔۔۔ریلیز ہوئی تھی جو۔۔۔ ملکہ ترنم نور جہاں۔۔۔ کی بطور اداکارہ اور گلوکارہ ایک لازوال فلم تھی ۔اس فلم کی موسیقی ۔۔۔خواجہ خورشید انور۔۔۔نے دی تھی جبکہ اس کے لازوال گیت بھی۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔ہی کے زرخیز ذہن کی تخلیق تھے:
*۔۔۔جس دن سے پیا دل لے گئے۔۔۔دکھ دے گئے۔۔۔اس دن سے گھڑی بھر ہائے۔۔۔چین نہیں آئے۔۔۔
*۔۔۔او جانے والے رے۔۔۔ٹھہرو ذرا رک جاؤ۔۔۔لو ٹ آؤ۔۔۔
*۔۔۔چاند ہنسے، دنیا بسے،روئے میرا پیار۔۔۔درد بھرے دل کے میرے ٹوٹ گئے تار۔۔۔
*۔۔۔چھن چھن ناچوں گی۔۔۔گن گن گاؤں گی۔۔۔سیاں مورے آئیں گے ۔۔۔ان کو مناؤں گی۔۔۔
*۔۔۔ساون کی گھنگھور گھٹاؤ۔۔۔ترس گئے میرے نین پیا بن۔۔۔ برس برس مت مجھے رلاؤ۔۔۔
*۔۔۔آگئے ۔۔۔صنم پردیسی ۔۔۔بلم پردیسی۔۔۔
1957ء میں ایک اور شاہکار نغماتی فلم ۔۔۔عشق لیلیٰ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔کے کریڈٹ پر آئی تھی جس کے19میں سے بیشتر گیت سپر ہٹ ہوئے تھے۔ان امر گیتوں کے موسیقار ۔۔۔صفدر حسین۔۔۔تھے:
*۔۔۔جگر چھلنی ہے دل گبھرا رہا ہے۔۔۔محبت کا جنازہ جا رہا ہے۔۔۔ (عنایت حسین بھٹی)
*۔۔۔ستارو۔۔۔تم تو سو جاؤ۔۔۔پریشان رات ساری ہے۔۔۔ (اقبال بانو)
*۔۔۔چاند تکے چھپ چھپ کے اونچی کھجور سے۔۔۔ (زبیدہ خانم، سلیم رضا)
*۔۔۔نکل کر تیری محفل سے یہ دیوانے کہاں جائیں۔۔۔ (عنایت حسین بھٹی)
*۔۔۔بتا اے آسمان والے۔۔۔میرے نالوں پہ کیا گزری۔۔۔ (عنایت حسین بھٹی، زبیدہ خانم)
*۔۔۔لیلیٰ لیلیٰ پکاروں میں بن میں۔۔۔پیار ی لیلیٰ بسی میری من میں۔۔۔ (عنایت حسین بھٹی)
*۔۔۔اک ہلکی ہلکی آہٹ ہے۔۔۔اک ہلکا ہلکاسایہ ہے۔۔۔ (اقبال بانو)
1958ء کا سال۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔کے لئے ۔۔۔انار کلی۔۔۔اور۔۔۔زہر عشق ۔۔۔جیسی بڑی بڑی میوزیکل فلمیں لے کر آیا تھا۔فلم ۔۔۔انار کلی۔۔۔ میں ایک بار پھر ۔۔۔ملکہ ترنم نور جہاں۔۔۔نے بطور اداکارہ اور گلوکارہ اپنی عظمت کی دھاک بٹھا دی تھی۔موسیقار۔۔۔رشید عطرے ۔۔۔اور۔۔۔ ماسٹر عنائت حسین ۔۔۔کی دھنوں پر ۔۔۔قتیل شفائی ۔۔۔کے یہ گیت گلی گلی گونجے تھے:
*۔۔۔کہاں تک سنو گے۔۔۔کہاں تک سناؤں۔۔۔ہزاروں ہی شکوے ہیں۔۔۔کیا کیا بتاؤں۔۔۔
*۔۔۔جلتے ہیں ارمان میرا دل روتا ہے۔۔۔قسمت کا دستور نرالا ہوتا ہے۔۔۔
*۔۔۔صدا ہوں اپنے پیار کی۔۔۔جہاں سے بے نیاز ہوں۔۔۔
*۔۔۔بانوری چکوری۔۔۔کرے دنیا سے چوری چوری۔۔۔چندا سے پیار۔۔۔
*۔۔۔بے وفا ۔۔۔ہم نے بھولے تجھے۔۔۔ساری دنیا نے ہم سے کہا ۔۔۔بھول جا۔۔۔
فلم ۔۔۔زہر عشق۔۔۔کی موسیقی ۔۔۔خواجہ خورشید انور۔۔۔نے مرتب کی تھی جس کے گیتوں کو ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔کے قلم نے امر کر دیا تھا:
*۔۔۔سنو عرض میری کملی والے ﷺ۔۔۔کوئی کیا سمجھے ۔۔۔کوئی کیا جانے۔۔۔میرے دل کی لگی۔۔۔ (زبیدہ خانم)
*۔۔۔موہے پیا ملن کو جانے دے بیرنیا۔۔۔ (ناہید نیازی)
*۔۔۔پل پل جھوموں۔۔۔جھوم کے گاؤں۔۔۔دل میں پیار ہے تیرا۔۔۔ (کوثر پروین)
1959ء میں ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔کو ۔۔۔ناگن۔۔۔جیسی یادگار فلم کے گیت لکھنے کا اعزاز حاصل ہوا تھا ۔اداکارہ ۔۔۔نیلو ۔۔۔کی بطور ہیروئن یہ پہلی سپر ہٹ فلم تھی۔صفد ر حسین ۔۔۔کے موسیقی میں مندرجہ ذیل گیت سپر ہٹ ہوئے تھے:
*۔۔۔سیاں جی کو ڈھونڈنے چلی۔۔۔پھروں میں گلی گلی۔۔۔جوگن بن کے۔۔۔ (ناہید نیازی)
*۔۔۔امبوا کی ڈاریوں سے جھولنا جھلا جا۔۔۔اب کے ساون تو سجن گھر آ جا۔۔۔ (اقبال بانو)
1963ء میں ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔نے فلم۔۔۔عشق پر زور نہیں۔۔۔کایہ شاہکار گیت لکھ کر گلوکارہ۔۔۔مالا۔۔۔کو صف اول کی گلوکارہ بنا دیا تھا۔اس گیت کی دھن ۔۔۔ماسٹر عنایت حسین ۔۔۔نے بنائی تھی جبکہ اس گیت میں ۔۔۔سائیں اختر۔۔۔ کا الاپ بڑا مشہور ہوا تھا:
*۔۔۔دل دیتا ہے رورو دہائی ۔۔۔کسی سے کوئی پیار نہ کرے۔۔۔
1965ء کی نغمہ بار فلم۔۔۔نائیلہ۔۔۔کے چند گیت بھی ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔کے قلم کا نتیجہ تھے:
*۔۔۔غم دل کو ان آنکھوں سے چھلک جانا بھی آتا ہے۔۔۔ (مالا)
*۔۔۔دل کے ویرانے میں اک شمع ہے روشن کب سے۔۔۔ (مالا)
یاد رہے یہ آخری گیت ایک دو گانے کی صورت میں ۔۔۔حمایت علی شاعر۔۔۔نے لکھا تھا جسے المیہ انداز میں۔۔۔قتیل شفائی ۔۔۔صاحب نے لکھا تھا۔طفیل ہوشیارپوری ۔۔۔اس فلم کے تیسرے نغمہ نگار تھے۔
1966ء کی فلم۔۔۔نغمہ صحرا۔۔۔میں۔۔۔ خانصاحب مہدی حسن۔۔۔ کا یہ انتہائی دلگداز گیت بھی ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔ہی کالکھا ہوا تھا:
*۔۔۔نظاروں نے بھری آہیں۔۔۔ستاروں کو نہ نیند آئی۔۔۔جو ہم تڑپے تو دنیا میں ہزاروں کو نہ نیند آئی۔۔۔
1968ء کی فلم۔۔۔دل میرا دھڑکن تیری۔۔۔ایک اور نغماتی فلم تھی جس کی موسیقی۔۔۔ماسٹر عنایت حسین ۔۔۔نے مرتب کی تھی۔اس فلم میں لکھے ہوئے ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔کے مندرجہ ذیل گیت بے حد مقبول ہوئے تھے:
*۔۔۔جھوم اے دل وہ میرا جان بہار آئے گا۔۔۔ (مسعود رانا)
*۔۔۔کیا ہے جو پیار تو پڑے گا نبھانا۔۔۔ (احمد رشدی/ مالا)
*۔۔۔روٹھ گئی کیوں مجھ سے تیری پائل کی جھنکار۔۔۔ (احمد رشدی، مالا)
*۔۔۔اب تو آجا کہ تجھے یاد کیا ہے دل نے۔۔۔ (مہدی حسن)
1969ء کی فلم۔۔۔دل بیتاب۔۔۔کا یہ گیت جو۔۔۔مہدی حسن۔۔۔اور۔۔۔ملکہ ترنم نور جہاں ۔۔۔ نے الگ الگ گایا تھا:
*۔۔۔ہم سے بدل گیا وہ نگاہیں تو کیا ہوا۔۔۔زندہ ہیں کتنے لوگ محبت کئے بغیر۔۔۔
اپنے وقت کا ایک سپر ہٹ گیت تھا جو میری بچپن کی حسین یادو ں میں سے ایک ہے اورجس کی دھن بھی ۔۔۔ماسٹر عنایت حسین ۔۔۔ نے بنائی تھی اور ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔کے فن کا ایک نمونہ تھا۔
اسی سال کی فلم۔۔۔ناز۔۔۔اپنے گیتوں کیوجہ سے بڑی مقبول ہوئی تھی جس میں ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔نے حسب سابق اپنا معیار بر قرار رکھا تھا:
*۔۔۔مجھے آئی نہ جگ سے لاج۔۔۔میں اتنے زور سے ناچی آج کہ گھنگرو ٹوٹ گئے۔۔۔ (مالا)
*۔۔۔ایک البیلا سجن۔۔۔تو نے گرفتار کیا۔۔۔آ میری زلف کی زنجیر تجھے پیار کروں۔۔۔ (مالا)
نثار بزمی ۔۔۔نے اس نغمہ بار فلم کی موسیقی مرتب کی تھی۔
اسی سال کی فلم ۔۔۔آنسو بن گئے موتی۔۔۔میں ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔کی کاوش تھی جس کی دھن ۔۔۔ماسٹر عنایت حسین ۔۔۔ نے بنائی تھی:
*۔۔۔رم جھم۔۔۔برسنے لاگی رے پھوار۔۔۔جب جب برسیں کاری بدریا۔۔۔ (مالا)
*۔۔۔اگر میں بتا دوں میرے دل میں کیا ہے۔۔۔ (احمد رشدی / رونا لیلیٰ)
1970ء کی فلم ۔۔۔سزا۔۔۔میں ۔۔۔قتیل شفائی ۔۔۔کے ان گیتوں نے دھوم مچا دی ۔موسیقار۔۔۔ناشاد۔۔۔تھے:
*۔۔۔تو نے بارباربار کیا مجھے بے قرار۔۔۔جارے سانورے پیا۔۔۔تیرا دیکھ لیا پیار۔۔۔ (مالا)
*۔۔۔میرے جوڑے میں گیندے کا پھول ۔۔۔میں تجھے کیسے دیکھوں۔۔۔ (مالا)
*۔۔۔جب بھی چاہیں اک نئی صورت بنا لیتے ہیں لوگ۔۔۔ (مہدی حسن)
*۔۔۔میں کیوں دامن کو پھیلاؤں۔۔۔میں کیوں۔۔۔کوئی دعا مانگوں۔۔۔ (احمد رشدی)
1971ء کی رومانٹک اور میوزیکل فلم۔۔۔سلام محبت۔۔۔کو کیسے بھلایا جا سکتا ہے جس کے گیتوں نے دھوم مچا دی تھی۔اس فلم کے ایک گیت کی دھن ۔۔۔رشید عطرے ۔۔۔نے بنائی تھی جبکہ ان کے انتقال کے بعد باقی گیتوں کو۔۔۔ خواجہ خورشید انور ۔۔۔نے کمپوز کیا تھا اور یہ گیت بڑے مقبول ہوئے تھے:
*۔۔۔کیوں ہم سے خفا ہو گئے اے جان تمنا۔۔۔ (مہدی حسن)
*۔۔۔سلام محبت۔۔۔بڑا خوبصورت ، بڑا دلربا ہے۔۔۔ (ملکہ ترنم نور جہاں /احمد رشدی)
1972ء کی ایک گمنام فلم۔۔۔زندگی ایک سفر ہے۔۔۔تھی جس میں ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔کے اس بامقصد گیت کو ۔۔۔خانصاحب مہدی حسن ۔۔۔نے موسیقار۔۔۔ناشاد۔۔۔کی دھن پر کیا خوب گایا تھا:
*۔۔۔ہر آدمی الگ سہی۔۔۔مگر امنگ ایک ہے۔۔۔جدا جدا ہیں صورتیں۔۔۔لہو کا رنگ ایک ہے۔۔۔
1973ء میں ایک سپر فلاپ فلم۔۔۔عظمت۔۔۔کے لئے ۔۔۔خانصاحب مہدی حسن۔۔۔ کے فلمی کیرئر کا سب سے سپر ہٹ گیت جو موسیقار ۔۔۔ناشاد۔۔۔کی دھن میں تھا، وہ بھی ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔ہی کا لکھا ہوا تھا:
*۔۔۔زندگی میں تو سبھی پیار کیا کرتے ہیں۔۔۔میں تو مر کر بھی میری جان تجھے چاہوں گا۔۔۔!
اسی سال کی ایک اور ناکام لیکن نغمہ بار فلم۔۔۔خواب اور زندگی ۔۔۔بھی ۔۔۔قتیل شفائی ۔۔۔کے فلمی کیرئر کی ایک اہم فلم تھی۔اس فلم میں موسیقار۔۔۔ناشاد۔۔۔کی دھنوں پر مندرجہ ذیل گیت بڑے مقبول ہوئے تھے:
*۔۔۔کل بھی تم سے پیار تھا مجھ کو۔۔۔تم سے محبت آج بھی ہے۔۔۔ (رونا لیلیٰ ، مسعودرانا)
*۔۔۔اک سانولی سی لڑکی ۔۔۔میرے دل کو بھا گئی ہے۔۔۔ (مسعود رانا)
1974ء کی ایک اور گمنام فلم۔۔۔دنیا گول ہے۔۔۔کا یہ دو گانا ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔کی شاعری کا ایک کمال تھا:
*۔۔۔اپنے ہاتھوں کی لکیروں میں بسالے مجھ لے۔۔۔تو ہے میرا تو نصیب اپنا بنا لے مجھ کو
اس غزل کو ۔۔۔خانصاحب مہدی حسن ۔۔۔اور ۔۔۔شاذیہ۔۔۔نے گایا تھا۔
1978ء کی فلم۔۔۔نذرانہ۔۔۔کا یہ دو گانا بھی ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔ہی کے زور قلم کا نتیجہ تھا جس کی دھن۔۔۔ ایم اشرف ۔۔۔نے بنائی تھی:
*۔۔۔بانٹ رہا تھا جب خدا۔۔۔سارے جہاں کی نعمتیں۔۔۔ (مہدی حسن ، ناہید اختر)
1979ء میں فلم ۔۔۔پہلی نظر۔۔۔میں ایک بار پھر ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔ بڑ ے عروج پر نظر آئے جب۔۔۔ ماسٹر عنایت حسین۔۔۔ کی دھنوں پر ان کے یہ گیت بڑے مقبول ہوئے تھے:
*۔۔۔دنیا کب چپ رہتی ہے۔۔۔کہنے دے جو کہتی ہے۔۔۔ (ملکہ ترنم نور جہاں)
*۔۔۔سجناں رے۔۔۔کیوں بھیگے تورے نین۔۔۔ (ملکہ ترنم نور جہاں)
*۔۔۔اے جان تمنا۔۔۔تیرا چرچا نہ کریں گے۔۔۔ (مہدی حسن)
1993ء کی فلم ۔۔۔مضبوط۔۔۔میں بھی ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔ کے گیت تھے لیکن یہ چربہ غزل بھی انہی سے منسوب کی جاتی ہے جس کی دھن ۔۔۔کمال احمد۔۔۔ نے بنائی تھی اور جسے ۔۔۔مسعود رانا ۔۔۔نے۔۔۔نیپالی اداکار۔۔۔شیوا۔۔۔کے لئے گایا تھا:
*۔۔۔چاند جیسا رنگ ہے تیرا ۔۔۔سونے جیسے بال۔۔۔ایک توہی دھنوان ہے گوری۔۔۔باقی سب کنگال۔۔۔
قتیل شفائی۔۔۔نے 1980ء میں ایک فلم ۔۔۔قصہ خوانی ۔۔۔بنائی تھی جو ان کی مادری زبان ۔۔۔ہندکو۔۔۔میں تھی۔اس فلم کی کاسٹ میں ۔۔۔یاسمین خان، سلطان راہی اور رنگیلا۔۔۔ وغیرہ تھے۔یہ پاکستان کی واحد ہندکو فلم ہے۔یاد رہے کہ ۔۔۔ہندکو۔۔۔کو ایک الگ زبان شمار کیا جاتا ہے لیکن یہ اصل میں پنجابی زبان ہی کی ایک شاخ ہے جو ایبٹ آباداور مری سے لے کر پشاور تک کے علاقوں میں بولی جاتی ہے اور دو فیصد پاکستانیوں کی مادری زبان ہے۔حال ہی میں ان علاقوں پر مشتمل ۔۔۔صوبہ ہزارہ ۔۔۔کی تحریک بھی چلائی گئی ہے۔
قتیل شفائی نے متعدد پنجابی فلموں کے لئے بھی نغمہ نگاری کی تھی ۔مجھے اس وقت ان کی صرف ایک فلم۔۔۔محبت دی اگ(1994)۔۔۔یاد آرہی ہے جو اصل میں ایک ڈبل ورژن فلم تھی جس کے یہ گیت یاد ہیں:
*۔۔۔زندگی میری محبت دے سوا کجھ وی نئیں۔۔۔ (انور رفیع)
*۔۔۔دل دل دل۔۔۔ہائے میرا دل۔۔۔مار گیا مینوں تیرے مکھڑے دا تل۔۔۔ (مسعود رانا)
*۔۔۔مک جان جدائیاں دے غم سارے۔۔۔سجن بے پرواہ جے نال ہووے۔۔۔ (مسعودرانا)
یہ آخری گیت مشہور زمانہ فلم۔۔۔دلاں دے سودے (1969ء)۔۔۔کے ایک گیت کا ری میک تھا جسے اتفاق سے۔۔۔ میڈم نور جہاں۔۔۔ اور ۔۔۔مسعود رانا ۔۔۔نے الگ الگ گایا تھا اور پچیس سال بعد ایک بار پھر اسی دھن پر ۔۔۔مسعودرانا۔۔۔ہی نے گایا تھا جبکہ ۔۔۔نذیر علی۔۔۔ ہی دونوں فلموں اور گیتوں کے موسیقار تھے۔
ان کے علاوہ مندرجہ ذیل فلموں میں ان کے گیت تھے لیکن فلمی ٹائٹلز پر ایک سے زائد نام ہونے کی وجہ سے یہ جاننا ممکن نہیں کہ ان میں کون سا گیت ۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔کا لکھا ہوا تھا:
گمنام (1954ء)۔۔۔حمیدہ (1956ء)۔۔۔ ایاز (1960ء)۔۔۔قیدی ۔۔۔محبوب(1962ء)۔۔۔ اک تیرا سہارا (1963ء) ۔۔۔ چنگاری ۔۔۔فرنگی۔۔۔شباب(1964ء)۔۔۔ حویلی (1964ء )۔۔۔دیوداس (1965ء)۔۔۔ پائل کی جھنکار (1966ء)۔۔۔جان آرزو (1967ء)۔۔۔مہمان (1968ء)۔۔۔پاک دامن (1969ء)۔۔۔رم جھم۔۔۔نجمہ (1970ء)۔۔۔دوستی (1971ء) ۔۔۔ محبت (1972ء)۔۔۔سرحد کی گود میں (1973ء)۔۔۔زبیدہ (1976ء)۔۔۔نیک پروین (1976ء)۔۔۔بھروسہ (1978ء)۔۔۔نام میرا بدنام (1984ء) ۔۔۔ بازار حسن (1984ء)۔۔۔زمین آسمان (۱۹۸۵ء)
قتیل شفائی۔۔۔24دسمبر 1919ء کو ۔۔۔ہر ی پور ہزارہ (صوبہ خیبر پختونخواہ)۔۔۔میں پیدا ہوئے تھے۔ان کا اصل نام ۔۔۔اورنگزیب خان۔۔۔تھا ۔"قتیل "۔۔۔ان کا تلفظ اور ۔۔۔"شفائی"۔۔۔ ان کے استاد کے نام کا لاحقہ تھا ۔تیرہ برس کی عمر سے شعر کہنا شروع کر دیا تھا لیکن والد کے انتقال کے باعث روایتی تعلیم جاری نہ رکھ سکے تھے۔بتایا جاتا ہے کہ ان کا پہلا مجموعہ کلام ۔۔۔ہریالی۔۔۔1942ء میں چھپا تھا۔تقسیم سے قبل ایک فلم کے گیت لکھے تھے لیکن وہ فلم مکمل نہ ہو سکی تھی ۔انہوں نے پڑوسی ملک کی چند فلموں میں بھی نغمہ نگاری کی تھی۔
11جولائی 2001ء کو82برس کی عمر میں۔۔۔قتیل شفائی۔۔۔کاانتقال ہوا تھا۔
یہ مضمون پاکستان فلم میگزین میں شائع ہوا

No comments: